پیغام عید الاضحی

سرینگر/23ستمبر2015/عید الاضحی کے مقدس موقعہ پر مسلمین جہاں بالخصوص اسلامیان جموں و کشمیر کو دل کی عمیق گہرائیوں سے ہدیہ تبریک و تہنیت پیش کرتے ہوئے خالق مطعلق کی بارگاہ میں دین اسلام کی سربلندی اور عالم اسلام کی امن و سلامتی کیلئے دست بدعا ہوں۔ عیدا لاضحی تقرب الٰہی کیلئے خدائے بزرگ و برتر کے عظیم پیغمبر سیدنا حضرت ابراہیمؑ کے جذبہ ایثار اور خلوص نیت کی یاد تازہ کرتے ہوئے فرزندان توحید کی توجہ اس حقیقت کی طرف مبذول کراتی ہے کہ بندہ مومن کا ابدی اور حقیقی سرمایہ حکم الٰہی کی تعمیل اور خوشنودی ہے ۔ اس راہ میں کسی چون چراہ کی گنجائش نہیں۔ ایک والد کا اپنے لخت جگر کو ذبح کرنے پر شعوری طور پر رضا و رغبت کے ساتھ آمادہ ہونا بلا شبہ عزیمت اور عشق الٰہی کی معراج ہے۔ خداوند عالم نے سیدنا حضرت ابراہیمؑ کی یہ ادا اس قدر پسند فرمائی کہ قربانی حضرت اسمائیل کی یاد کو حج کی صورت میں تا قیام قیامت باقی رکھا۔ اس سال مکہ مکرمہ میں موسم حج کے دوران پیش آئے دلدوز واقعہ پر اپنے گہرے صدمے اور رنج وغم کا اظہار کرتے ہوئے تمام شہید حجاج کے لواحقین سے اظہار تعزیت کرتا ہوں۔یہ ہمارے لئے لمحہ فکریہ نہیں تو اور کیا ہے کہ خدا کی خوشنودی کیلئے ایک نبیؐ اپنے فرزند کو ذبح کررہا ہے آج حکومت ہند مسلمانوں کو شریعت میں حلال کردہ بڑے گوشت پر پابندی کیلئے فرسودہ قوانین کو ازسر نو مسلمانوں پر نافذ کرنے پر تلی ہوئی ہے۔ عید قربان کے موقعہ پر بڑے جانوروں کی قربانی فریضہ الٰہی کے ساتھ ساتھ اس دقیانوسی قانون کے خلاف احتجاج کا ایک موثر طریقہ ہے۔ ریاست جموں کشمیر میں بڑے گوشت پر پابندی کیلئے عدلیہ کی دلچسپی اور ریاست میں انسان کشی کی کھلی چھوٹ کیلئے نافذ کالے قوانین ، ریاست کی مزاحمتی قیادت کے سیاسی و سماجی سرگرمیوں پر قدغن اور برسا ہا برس سے جیلوں میں مقید حریت پسندوں کو عدالتی احکامات کے باوجود نظر بند رکھنا حکومت ہند کے کشمیر دشمن ایجنڈے کی وہ کڑیاں ہیں جو ہم سب کیلئے چشم کشا ہیں۔ آئیے اس موقعے پر تجدید عہد کریں کہ ہم اہلیان جموں کشمیر اپنی برحق جدوجہد کو منطقی انجام تک پہنچانے کیلئے اور اپنے لاکھوں شہداء کی قربانیوں کی حفاظت کے تمام تقاضے پورا کریں گے۔ اس موقعہ پر کشمیری حریت پسند عوام بھارت اور پاکستان کی حکومتوںسے یہی امید رکھتے ہیں کہ دونوں ممالک خطے کے محفوظ مستقبل اور ترقی و خوشحالی کیلئے تنازعہ کشمیر پر سنجیدہ مذاکرات کا آغاز کریں گے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔