شہید قاسم سلیمانی کی شہادت نے امریکہ سمیت دنیا بھر کی استعماری طاقتوں کو بے نقاب کردیا: آغا سید حسن

(سرینگر:) جموں و کشمیر انجمن شرعی شیعیان کے صدر، حجۃ الاسلام والمسلمین آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے شہید جنرل قاسم سلیمانی کی شہادت کی برسی پر ایک اہم بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ یہ سمجھتا تھا کہ قاسم سلیمانی کو شہید کرکے وہ اپنے مقصد میں کامیاب ہوجائے گا لیکن اس کے بالکل برعکس ہوا اور اس عظیم مجاہد کی شہادت نے نہ صرف امریکہ بلکہ دنیا بھر کی استعماری طاقتوں کو بے نقاب کردیا۔

انہوں نے اپنے بیان میں دشمن کا مقابلہ کرنے کے لیئے اہم بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر دشمن کو ذلت آمیز شکست سے دوچار کرنا ہے تو شہید قاسم سلیمانی کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اپنی صفوں میں اتحاد اور بہترین حکمت عملی اپنانے کی ضرورت ہے۔

آغا سید حسن کا کہنا تھا کہ شہید قاسم سلیمانی، ایک ایسی شخصیت کا نام تھا جس نے امریکا کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیا تھا،   اور حقیقت یہ ہیکہ دنیا میں وہ قومیں سربلند ہوتی ہیں، جن کے سپوت اپنے سماج، اپنی ملت اور اپنے ملک کے وقار کی خاطر اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرتے ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ جنرل سلیمانی دنیا کے ان چند افراد میں سے ایک ہیں، جن کے چاہنے والے بھی بے پناہ ہیں اور ان کی مخالفت کرنے والے بھی لاکھوں میں ہیں، جنرل قاسم سلیمانی کا قصور اس کے علاوہ اور کوئی نہیں کہ وہ ایرانی ہیں، وہ ایسے شخص تھے، جنھوں نے لبنان، عراق اور شام میں امریکی مفادات اور دہشت گردوں کو بے انتہا نقصان پہنچایا۔

انجمن شرعی شیعیان کے صدر نے کہا کہ یہ جنرل قاسم سلیمانی ہی تھے، جنھوں نے شام کے صدر بشار الاسد کو عالمی دہشت گرد گروہ داعش کے خلاف حکمت عملی بنا کر دی اور پھر روس کی فضائیہ اور شامی فورسز نے جنرل قاسم کی حکمت عملی کے تحت دہشت گرد گروہ داعش کو شام میں شکست سے دوچار کیا، بالخصوص شام، یمن، عراق اور لبنان میں جنرل قاسم نے ایسی ملیشیاء فورسز کی بھرپور مدد کی، جو اسلامی مقاومت اور مزاحمت کے لیے بر سرِ پیکار ہیں۔

انہوں نے جنرل شہید قاسم سلیمانی کو دنیا بھر کے دہشت گردوں کے لیئے موت کا سایہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ داعش، القاعدہ، النصرہ، الشباب، الغرض وہ ساری دہشت گرد تنظیمیں، جنھیں صہیونیوں کی مالی اور ایک خاص اسلامی ملک کی فکری سپورٹ حاصل رہی، جنرل قاسم  سلیمانی، ان ساری دہشت گرد تنظیموں کے لیے موت کا سایہ بنے ہوئے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ جنرل قاسم سلیمانی کی شہادت نے مزاحمتی تحریکوں کو ایک نیا جوش و ولولہ عطا کیا ہے، اور اب وہ امریکہ و اسرائیل کی حکمت عملیوں کو ناکام بنانے کے لیے نئے ولولے اور جذبے کے ساتھ سینہ سپر ہوں گے۔

انہوں نے امریکی شکست کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ان شاءاللہ تعالیٰ ہمیں یقین ہیکہ امریکیوں کو ذلیل و خوار ہوکر خطے  سے بھاگنا پڑے گا اور امریکیوں کے علاقے سے نکل جانے کے بعد بیت المقدس کی آزادی کا وقت قریب آجائے گا اور  مظلوم فلسطینیوں اور دنیا بھر کے مظلوموں کو چین اور سکون میسر ہوگا۔

آغا سید حسن نے اپنے بیان کے آخر میں شہید جنرل قاسم سلیمانی کے نقش قدم پر چلنے کی تلقین کرتے ہوئے کہا کہ بالکل وہ وقت قریب ہیکہ دشمن شکست کھا کر ذلیل ہوگا اور اسے مشرق وسطیٰ سے بھاگنا پڑے گا، لیکن اس کے لیئے ہم سب کے لیئے ضروری ہیکہ شہید قاسم سلیمانی کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کریں اور دشمن کا مقابلہ کرنے کے لیئے ایک بہترین حکمت عملی تیار کریں تاکہ اسلام اور مسلمانوں کے دشمن کو ہر محاز پر ذلت آمیز شکست سے دوچار کرسکیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔