شہدائے پشاور اور لال چوک دھماکہ میں جان بحق افراد کو خراج عقیدت، مرکزی امام باڑہ بڈگام میں شہداء کے ایصال ثواب کے لئے مجلس ترحیم کا انعقاد

(بڈگام) شہدائے پشاور پاکستان اور لال چوک گرینیٹ دھماکے میں جان بحق افراد کے ایصال ثواب کے لئے جموں و کشمیر انجمن شرعی شیعیان کے اہتمام سے بعد از نماز جمعہ مرکزی امام باڑہ بڈگام میں مجلس ترحیم کا انعقاد ہوا جس میں شہداء کے ایصال ثواب کے لئے قرآن خوانی اور فاتحہ خوانی کے ساتھ ساتھ مرثیہ خوانی کی گئی۔

خطبہ جمعہ کے دوران انجمن شرعی شیعیان کے صدر حجت الاسلام والمسلمین آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے شہدائے پشاور کو شاندار خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے ان کی مظلومانہ شہادت کو انسانیت کا بدترین قتل قرار دیا۔

آغا صاحب نے کہا کہ پاکستان میں مسلکی انتہا پسندی بالخصوص شیعہ دشمن انتہا پسند نیٹورک دراز مدت سے متحرک ہے اور شیعیان پاکستان کو نہایت بے دردی کے ساتھ مساجد اور امام بارگاہوں میں دہشت گردی کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، پاکستان کے شیعہ طبقہ کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے حکومت پاکستان کی کوششیں نتیجہ خیز ثابت نہیں ہو رہی ہیں کیونکہ مدارس اور منبروں سے مسلکی انتہا پسندی اور شیعہ دشمن فکر و نظریات کو آزادانہ طور پر فروغ دیا جا رہا ہے۔ آغا صاحب نے حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا کہ وہ شیعہ دشمن انتہا پسند فکر و نظریات کی آبیاری کرنے والے عناصر کی لگام کسنے میں مصلحت پسندی کا مظاہرہ نہ کریں۔

آغا صاحب نے کہا کہ پاکستان دنیائے اسلام میں ایک قائدانہ حثیت والا ملک ہے اور وہاں مسلکی انتہا پسندی کے بدترین سانحات کا تسلسل کے ساتھ رونما ہونا ایک ملی المیہ ہے۔

دوسری جانب لال چوک دھماکے میں جان بحق جوان سال رافعیہ نذیر اور اسلم مقدومی کے لواحقین سے تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے آغا حسن نے کہا کہ مصروف بازاروں میں گرینیٹ پھینکنے والے عناصر انسانیت دشمنی کے مرتکب ہیں اور ایسے حملے کسی بھی طور پر قابل قبول نہیں ہیں۔

آغا صاحب نے شہداء کے بلند درجات کے لئے دعا کی اور وادی بھر میں امن و سلامتی کے بحال کے لیئے حکومت سے پرزور مطالبہ کیا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔