یوم شہادت امام موسیٰ کاظم ؑ کے موقع پر مرکزی امام باڑہ بڈگام میں مجلس عزاء کا انعقاد، آغا سید حسن نے امام عالی مقام کی سیرت طیبہ اور کردار پر تفصیل سے روشنی ڈالی

(بڈگام)  25 رجب المرجب یوم شہادت باب الحوائج حضرت امام موسیٰ کاظم علیہ السلام کے موقع پر مرکزی امام باڑہ بڈگام میں ایک عظیم الشان مجلس عزاء کا انعقاد کیا گیا جس میں آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے امام عالی مقام کی سیرت طیبہ اور کردار پر تفصیل سے روشنی ڈالی۔
تفصیلات کے مطابق سلسلہ امامت کی ساتویں کڑی باب الحوائج حضرت امام موسیٰ کاظم علیہ السلام کے یوم شہادت کی مناسبت سے انجمن شرعی شیعیان جموں و کشمیر کے زیر اہتمام حسب عمل قدیم مرکزی امام باڑہ بڈگام میں مجلس عزا کا انعقاد کیا گیا جس میں وادی کے اطراف واکناف سے آئے ہزاروں کی تعداد میں عقیدت مندوں نے شرکت کی اور مجلس عزاء میں تنظیم کے شعبہ عزاداری سے وابستہ مرکزی ذاکرین نے مرثیہ خوانی کی۔

انجمن شرعی شیعیان کے صدر حجۃ الاسلام والمسلمین آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے نماز ظہرین کی پیشوائی کے بعد مجلس عزا سے خطاب کیا۔

آغا صاحب نے حضرت امام موسیٰ کاظم علیہ السلام کی حیات طیبہ اور سیرت و کردار کے مختلف گوشوں کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ حضرت امام موسیٰ کاظم علیہ السلام کے دور امامت میں خلافت اسلامیہ کے نام پر ملوکیت کا سلسلہ اپنے عروج پر پہنچ چکا تھا، امراء سلطنت کی طرف سے دین و شریعت میں تحریفات، بدعات اور فرسودات شامل کرنے کا سلسہ بھی جاری تھا، اور اسلام ناب محمدی ؐ کے بجائے مسلمان نما سلاطین کو حکومتی سطح پر پروان چڑھایا جارہا تھا اور امام عالی مقام ؑکی برگزیدہ شخصیت حکمرانوں کے عزائم کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ثابت ہو رہی تھی اس لئے امام عالی مقام ؑ کو مدینہ منورہ سے جلاوطن کرکے 17 سال تک بغداد میں پابند سلاسل کیا گیا اور حالت اسیری میں ہی شہید کردیا۔

آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے کہا کہ امام عالی مقامؑ کے سانحہ شہادت کا ایک نمایاں درس و پیغام یہ ہے کہ بحیثیت مسلمان ہمیں ارباب حکومت کے اسلام دشمن اقدامت پر خاموشی اختیار نہیں کرنی چاہیئے۔

اس موقع پر آغا صاحب نے مرکزی امام باڑہ بڈگام میں منعقدہ مجلس عزاء کے سلسلے میں ضلع انتظامیہ کی عدم توجہی پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مجلس عزاء میں ہزاروں افراد کی شرکت کے باوجود انتظامیہ نے عوامی سہولیات کے لئے کوئی بھی اقدام نہیں کیا جو قابل افسوس بات ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔