کووڈاسپتال کی رشی پورہ بڈگام سے کھنموہ منتقلی آغا حسن کا شدید رد عمل

غیر موزوں مقام پر اسپتال کا قیام عوامی مفاد میں نہیں ہے
انجمن شرعی شیعیان کے صدر حجت الاسلام والمسلمین آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے ریشی پورہ بڈگام میں COVIDاسپتال کی تعمیری کام کو روک کر اسے کھنموہ منتقل کرنے پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ایک غیر موزوں مقام پر اسپتال کی تعمیر عوامی مفادات کے ساتھ کھلا کھلواڑ ہے آغا صاحب نے کہا کہ ریشی پورہ بڈگام اسپتال کے قیام کے لئے ہر جہت سے ایک معقول اور مناسب مقام ہے یہ جگہ ضلع بڈگام اور ضلع سرینگر کے وسط میں ریلوے ٹریک پر واقعہ ہے  جہاں تمام وادی کے لوگ بالخصوص ضلع سرینگر اور ضلع بڈگام کے عوام آسانی کے ساتھ آ اور جا سکتے ہے آغا صاحب نے کہا کہ اسپتال کو ضلع سرینگر کے آخری شمال مشرقی گاوں کھنموہ کے صنعتی علاقہ میں قائم کرنا کسی بھی صورت میں ایک عوام دوست اقدام نہیں جہاں اسپتال قائم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے وہاں ہر طرف کارخانے اور سیمنٹ فکٹریاں ہے اور اس علاقعہ کو ماہرین نے فضائی آلودگی کی آما جگاہ قرار دیا ہے اور اس علاقعہ کے شمال مشرق کی طرف سینکڑوں میل تک کوئی انسانی آبادی نہیں آغا صاحب نے افسوس ظہار کیا کہ بااثر و رسوخ اناثر کو فائدہ پہنچانے کے لئے ایسا کیا جا رہا ہے انھوں نے کہا کہ علاقہ ریشی پورہ بڈگام کو ایک دلدلی علاقہ بتا کر یہاں اسپتال کے قیام کا فیصلہ واپس لیا گیا حالاکہ اسی علاقہ میں بڑے بڑے حکومتی ادارے اور تعمیری ڈھانچے قائم ہیں آغا صاحب نے گورنر انتظامیہ سے پر زور مطالبہ کیا کہ مذکورہ اسپتال کو کسی ایسی جگہ تعمیر کیا جائے جہاں تک عام لوگوں کی رسائی آسان ہو اور زیادہ سے زیادہ لوگ استفادہ کر سکیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔