سانحہ مکہ معظمہ ملی المیہ، حکومت سعودیہ کا موقف اصول و منطق سے عاری: آغاسید حسن

سرینگر/28ستمبر2015/ فریضہ حج کی ادائیگی کے دوران مکہ معظمہ میں بھگدڑ مچ جانے سے بڑے پیمانے پر حجاج کرام کی شہادتوں کے دلدوز واقعہ پر گہرے رنج وغم کا اظہار کرتے ہوئے انجمن شرعی شیعیان کے سبراہ و جعفریہ سپریم کونسل کے سرپرست اعلیٰ حجۃالاسلام والمسلمین آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے اس سانحہ کو ایک ملی المیہ سے تعبیر کیا ۔ آغا صاحب نے سانحہ میں شہید سینکڑوں حجاج کرام کے لواحقین سے تعزیت و تسلیت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس سلسلے میں حکومت آل سعود کا موقف اصول و منطق سے عاری ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کعبۃ اللہ امت مسلمہ کا مرکز اور حج ملت اسلامیہ کا سب سے بڑا دینی و سیاسی اجتماع ہے۔ فریضہ حج کی احسن اور اطمینان بخش ادائیگی اور حجاج کرام کے جان و مال کی حفاظت حکومت سعودیہ کی اولین ذمہ داری ہے۔ اس سلسلے میں معمولی کوتاہی پر بھی حکومت سعودیہ امت مسلمہ کے سامنے جواب دہ ہے۔ سانحہ مکہ میں وسیع پیمانے پر حجاج کی شہادتیں سعودی حکمرانوں کی ناقص کارکردگی اور غیر ذمہ داری کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ یہ سانحہ اس ضرورت کا متقاضی ہے کہ حکومت سعودیہ کو حج کے انتظام و انصرام میں دیگر ذمہ دار اسلامی ممالک کو بھی شریک کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ سانحہ کی تحقیقات کیلئے مختلف اسلامی ممالک کے نمایندوں پر مشتمل ایک تحقیقاتی ٹیم تشکیل دی جائے اور تحقیقاتی رپورٹ کے تناظر میں حج کے انتظام و انصرام کے حوالے سے مربوط لایحہ عمل مرتب کیا جائے ۔ آغا صاحب نے افسوس ظاہر کیا کہ امریکی اور اسرائیلی سرپرستی میں برہنہ پا یمنی قوم پر جارحیت کو سند جواز بخشنے کیلئے حج جیسے عظیم اجتماع کا سہارا لیا گیا اور امن کے گھر سے پہلی بار اسی مسلمان قوم کے کشت و خو ن کو جاری رکھنے کی ترغیب دی گئی۔ دریں اثنا انجمن شرعی شیعیان کے ترجمان نے عید الاضحی کے موقعہ پر اسلامی شریعت کے منافی قوانین کے خلاف کشمیری عوام کے احتجاجی جذبات اور رد عمل کے خوف سے کئی علمائے دین ، حریت قائدین اور خطیب حضرات کی گرفتاریوں کی پُر زور مذمت کی۔ ترجمان نے گزشتہ کئی دنوں سے وادی میں انٹرنیٹ سروس کو معطل رکھنے کی بھی پُر زور الفاظ میں مذمت کی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔