جوان سال لڑکی پر تیزآبی حملہ درندانہ فعل اور سنگین سماجی جرم، جامع مسجد سرینگر میں نماز جمعہ پر مسلسل قدغن باعث تشویش: آغا سید حسن

(بڈگام) جموں و کشمیر انجمن شرعی شیعیان کے صدر، حجۃ الاسلام والمسلمین آغا سید حسن الموسوی الصفوی نے سرینگر میں ایک جوان سال لڑکی پر سفاکانہ تیز آبی حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے ملوثین کے خلاف قرار واقعی قانونی کاروائی کا مطالبہ کیا۔

آغا سید حسن نے کہا کہ اس طرح کی درندانہ حرکات انسانیت سوزی کی بد ترین مثال ہے، آغا صاحب نے ملوثین کی گرفتاری پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ عدلیہ اس معاملے میں متاثر ہ لڑکی کو بھر پور انصاف فراہم کرے گی۔

مرکزی امام باڑہ بڈگام میں نماز جمعہ کے بھاری اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے آغا سید حسن نے اس سانحہ کو ایک ناقابل برداشت سماجی جرم قرار دیا اور متاثر لڑکی کی جلد شفایابی کی دعا کی۔

واضح رہے کہ وادی میں انجمن شرعی شیعیان کے زیر اہتمام تمام جمعہ مراکز پر ائمہ حضرات نے اس سانحہ کی شدید الفاظ میں مذمت کی۔

دوسری جانب آغا صاحب نے مرکزی جامعہ مسجد سرینگر میں نماز جمعہ اور دیگر مذہبی تقاریب پر مسلسل قدغن پر شدید برہمی ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ یہ صورتحال کشمیری مسلمانوں کے لئے نہایت تکلیف دہ اور باعث تشویش ہے۔

آغا صاحب نے کہا کہ آمریت کے طولانی دور میں یہ دینی مرکز اتنی مدت تک کبھی مقفل نہیں رہا جمہوری نظام میں ایک قدیم اور معروف جامع مسجد کا مسلسل مقفل رہنا نہایت دلدوز ہے۔

اس موقعہ پر مرجع تقلید آیت اللہ العظمیٰ لطف اللہ صافی گلپایگانی کی رحلت پر رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے آغا صاحب نے مرحوم کی دینی تالیفی اور علمی خدمات کو خراج پیش کیا مرحوم کے ایصال ثواب کے لئے اجتماعی فاتحہ خوانی اور قرآن خوانی کی گئی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔